what is shares and stock market 147

شیئرز اور سٹاک مارکیٹ کیا ہیں اور اس سے پیسہ کیسے کمایا جاتا ہے

پیسہ وہ چیز ہے جو زندگی گزارنے کے لئے ایک اہم عنصر ہے۔ ہر کوئی عیش وعشرت کی زندگی گزارنے کے لئے یا پھر ایک سادہ سی بھی زندگی کی گزربسر کے لئےپیسے کی تلاش میں رہتا ہے۔بہت سے لوگ گورنمنٹ یا پھر پرائیویٹ نوکری کر لیتے ہیں اور کچھ لوگ اپنا کاروبار کرناپسند کرتے ہیں۔ یہ بات سچ ہے کہ اسلام میں بھی برکت زیادہ تجارت میں ہی ہے۔ جو لوگ کاروبار کرتے ہیں وہ تو شئیرز اور سٹاک مارکیٹ کو اچھے سے جانتے ہوں گے۔ لیکن کچھ لوگ جو نئے نئے کاروبار میں قدم رکھتے ہیں اُن کو اِن ناموں کا چرچا ہر جگہ سننے کو ملتا ہے۔اگر آپ بھی اس کے بارے میں نہیں جانتے اور اس میں انوسٹ کر کے پیسہ کمانے کا سوچ رہے ہیں تو آج کا آرٹیکل خاص آپ کے لئے ہے۔

شئیرز کیا ہیں؟

فرض کرتے ہیں کہ ایک بندے کے پاس 10لاکھ تھا اور اس نے ایک کاروبار شروع کر لیا۔ کاروبار کچھ وقت میں اچھا چل نکلا اور آمدنی بھی آنا شروع ہو گئی لیکن اب اس کاروبار کا مالک چاہتا ہے کہ وہ اس کو اور زیادہ بڑھائے لیکن اس کے پاس ابھی اتنے پیسے نہیں ہیں کہ وہ لگا سکے۔ تو وہ اپنے کسی دوست سے کہے گا کہ بھائی ایک کام کرو تم کچھ پیسے مجھے دو میں کاروبار میں لگاتا ہوں۔ جب اِدھر سے پیسہ آئے گا تواتنے فیصد تمہیں پیسے دو دوں گا۔ اِسی کو شیئرز کہا جاتا ہے۔ کوئی بھی کمپنی کا مالک جب اپنی کمپنی کا کچھ حصہ آگے لوگوں کو دے دیتا ہے تو آگے کمپنی کو نقصان ہو یافائدہ، جن جن لوگوں نے اسے خریدا ہو گا اُن کے کھاتے میں جائے گا۔

سٹاک ایکس چینج

جس جگہ کمپنیز جن کو اپنے کاروبار کا کچھ حصہ بیچنا ہوتا ہے اور وہ لوگ جنہیں خریدنا ہوتا ہے ، سٹاک ایکس چینج کہلاتی ہے۔یہ طریقہ کافی وقت سے چلا آرہا ہے۔ انٹرنیٹ سے پہلے کے دور میں جب کسی بندے کو اپنے کاروبار کے شئیرز بیچنے ہوتے تھے تو ایک جگہ سب اگٹھے ہوتے تھے اور وہاں پر بولی لگائی جاتی تھی۔ لیکن اس جدید دور میں سب کام آنلائن ہوتا ہے۔پاکستان کا اسٹاک ایکس چینج کراچی میں واقع ہے۔وہاں دن بھر شیئرز خریدے اور بیچے جاتے رہتے ہیں۔پہلے پہل ہر کوئی آسانی سے اپنے کاروبار کے شئیرز بیچ سکتا تھا لیکن آہستہ آہستہ رولز سخت ہوتے چلے گئے۔اپنے کاروبار کے شئیرز لوگوں کے بیچنے کے لئے آپ کو اپنی کمپنی سٹاک ایکس چینج میں رجسٹر کروانی پڑتی ہے۔ یہ اس لئے کیا جاتا ہے تا کہ جو لوگ شئیرز کو خریدیں انہیں نقصان نہ ہو، کوئی جعلی کمپنی لوگوں کے ساتھ فراڈ نہ کر سکے۔

شئرز کیسے خریدیں؟

جب بھی لوگ کسی کمپنی کے شئیرز خریدتے ہیں تو یہ بات دیکھنی پڑتی ہے کہ آیا وہ کمپنی پرافٹ میں جا رہی ہے یا دن بہ دن نقصان میں جا رہی ہے۔ اگر نقصان میں جا رہی ہے تو مطلب آپ اگر اس کے شئیرز خرید لیتے ہیں تو آپ کے پیسے ضائع ہو سکتے ہیں۔جیسا کہ فیس بک اور گوگل ہو کمپنیز ہیں جن کے اگر شئیرز خریدے جائیں تو بہت کم چانسز ہیں کہ آپ کا نقصان ہو۔ لیکن ان کے شئیرز کروڑوں اربوں میں ہوتے ہیں۔اگر آپ کسی کمپنی کے مالک ہیں تو آپ کو دھیان رکھنا ہوتا ہے کہ 50٪ سے زیادہ کے شئیرز آپ کے پاس ہی رہیں کیونکہ اگرکسی کے پاس 50 یا اس سے زیادہ کے شئیرز ہیں تو وہ کمپنی میں اہم فیصلے لے سکتا ہے۔

اگر بات کی جائے انوسٹر کی حصیت سے کہ ہمیں انوسٹ کرنا چاہیے شئیرز میں یا نہیں؟ اس کا جواب ہے کہ آپ کو اس کے بارے میں تھوڑا بہت پتہ ہے تب ہی آپ اس فیلڈ میں قدم رکھیں۔اس بات کو اگنور نہیں کیا جا سکتا کہ اس میں بہت پیسہ ہے۔ وقت کے ساتھ ساتھ آپ اس سے پیسہ بنا سکتے ہیں۔ اگر آپ کو اس کی سمجھ بوجھ نہیں بھی ہے تو بھی شئیرزکا کام کر سکتے ہیں۔آج کے دور میں بہت سے ایسے بنکس ہیں جن کی مدد سے آپ شئیرز خرید اور بیچ سکتے ہیں۔ یہ بنکس آپ کو پرسنل ایک بروکر دیتے ہیں جو اپنے کام میں ایکسپرٹ ہوتے ہیں اور ان کا پورا دن یہی کام ہوتا ہے۔ بروکر وہ لوگ ہوتے ہیں جو آپ کے پیسے سے شئیرز خریدتے ہیں اورنقصان فائدے کو دیکھ کر اسے بیچتے ہیں۔ کئی بروکر کا کام کمپنیز اور کسٹمر کو ملوانا ہوتا ہے اور ڈیل ہو جانے پر وہ اپنا کمیشن فیصدی کے حساب سے لے لیتے ہیں۔ عام طور پر 1فیصد کمیشن رہتا ہے۔

اگر آپ نئے ہیں اور آپ کے پاس پیسے ہیں تو آپ اپنے کسی قریبی بنک میں جا کر اُن کے پیکجز چیک کر سکتے ہیں اور بروکر ہائر کر سکتے ہیں اور شئیرز کا کام شروع کر سکتے ہیں۔کئی بنکس میں آپ ایک گول رکھ سکتے ہیں کہ آپ کو گھر بنانا ہے، بیٹی کی شادی کرنی ہے، اپنی شادی کرنی ہےوغیرہ اور آپ کتنا پیسہ انوسٹ کر سکتے ہیں تو بنک والے آپ کو اُس حساب سے کوئی بھی پیکجز بنا کر دے دیں گے.

اگر آپ کو یہ انفارمیشن پسند آئی ہو تو نیچے ووٹ باکس میں ووٹ کریں اور نئے آرٹیکل پڑھنے کے لئے انگلی پوائنٹ کو سبسکرائب اور فیس بک پیج کو لائک کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں